ڈرون کے ذریعے کیموتھراپی دوا کی ترسیل کا منصوبہ

ڈرون کے ذریعے کیموتھراپی دوا کی ترسیل کا منصوبہ

ڈرون کے ذریعے کیموتھراپی دوا کی ترسیل کا منصوبہ
برطانوی نیشنل ہیلتھ سروس (این ایچ ایس) نے دنیا میں پہلی مرتبہ کیموتھراپی کی دوا کو ڈرون سے منتقل کرنے کا اعلان کیا ہے۔ اس سے کینسر کے مریضوں کو بروقت دوا کی فراہمی ممکن بنائی جاسکے گی۔

ڈرون سے کیموتھراپی کی ادویہ فراہم کرنے کے اس طریقے سے مریضوں کو طویل انتظار نہیں کرنا پڑے گا کیونکہ اول تو دوا ہر مریض کے لحاظ سے تیار کی جاتی ہے اور اسے فوری طور پر لگانا ہی مفید ہوتا ہے۔ دوسری جانب چھوٹے علاقے کے مریضوں کو کیموتھراپی کے لیے بڑے شہروں کا رخ کرنا پڑتا ہے۔ اس تناظر میں ڈرون انتہائی مددگار ثابت ہوسکتے ہیں۔

پورٹس ماؤتھ ہسپتال یونیورسٹی میں شعبہ ادویہ کے اسٹاف نے ایپیئن نامی کمپنی کے خودکار ڈرون سے آئی لینڈ آف وائٹ کی جانب کیموتھراپی دوا بھجوانے کا منصوبہ بنایا ہے۔ طبی مقاصد کے لیے بنایا گیا ڈرون ایک چارج میں ڈیڑھ گھنٹہ تک پرواز کرسکتا ہے۔ اس طرح این ایچ ایس کو دوا بھیجنے میں چار گھنٹے کی بجائے صرف نصف گھنٹہ صرف ہوگا۔

Spread the love

Leave a Reply

Your email address will not be published.