کورونا وائرس:مقبول موبائل ایپلی کیشن واٹس ایپ نے بڑا دعویٰ کردیا

پیغام رسانی کی سب سے بڑی موبائل ایپلی کیشن واٹس ایپ نے دعویٰ کیا ہے کہ کورونا سے متعلق جعلی معلومات اور جھوٹی خبروں کی روک تھام کے لیے اٹھائے جانے والے اقدامات کارگر ثابت ہوئے ہیں۔

کورونا وائرس پھیلنے کے بعد سوشل میڈیا کے مختلف پلیٹ فارمز پر صارفین وبا سے متعلق جعلی اور بے بنیاد خبریں پھیلا رہے تھے جس کے لیے کمپنیوں نے مختلف سخت اقدامات کیے جن کا سلسلہ تاحال جاری ہے۔

واٹس ایپ نے دعویٰ کیا ہے کہ اُن کے اٹھائے جانے والے اقدامات کارگر ثابت ہوئے اور جعلی معلومات یا جھوٹی خبروں کی حوصلہ شکنی میں بڑی کامیابی حاصل ہوئی۔

رپورٹ کے مطابق واٹس ایپ نے جعلی خبروں کی روک تھام کے لیے فارورڈ میسج کے طریقہ کار کو سخت اور اس کی تعداد کو کم کیا جس کی وجہ سے جعلی خبروں کا پھیلاؤ 70 فیصد تک کم ہوا ہے۔

ماہرین کے مطابق واٹس ایپ کے بیشتر صارفین اپنے نمبر پر موصول ہونے والے پیغام کو بغیر تصدیق کے اپنے دوستوں ، رشتے داروں اور مختلف گروپس میں شیئر کرتے تھے جس کی وجہ سے افراتفری پھیل جاتی تھی۔

کمپنی نے گزشتہ دنوں فارورڈ میسج کے حوالے سے بڑی پابندی عائد کی اور اس کی تعداد کو پانچ سے کم کر کے صرف ایک تک کردیا یعنی ایک وقت میں ایک ہی صارف کو پیغام بھیجا جاسکتا ہے۔

Spread the love